eid sad poetry

Share:

eid sad poetry

aaj hum apne dukhi doston k liye eid sad poetry post kar rahe hain , umeed hai ap logon ko pasand ayegi. Sad Eid ul Fitr poetry comes with huge collection of special Eid 2 line shayari, 4 lines poetry and sad Eid images reproduced by hamariweb.online Read Special Eid ke Ashaar for SMS, Facebook Status, messaging to your dear ones through Facebook or via Whats App. This is a selected and handpicked collection of Shayari for Eid given in Roman as well as Urdu fonts, which ever you need or like.


eid sad poetry

Payam e Aish o Ishrat Humain Sunata Hai
Hilal e Eid Hamari Hassi Urrata Hai

پیامِ عیش و مسرت ہمیں سناتا ہے
ہِلالِ عید ہماری ہنسی اُڑاتا ہے

———————————————————————————–

sad eid 2 line shayari

Dil Se Rukhsat Har Ik Ummid Hui
Aaj Hum Ghamzadon Ki Eid Hui

دِل سے رُخصت ہر اِک اُمید ہوئی
آج ہم غمزدوں کی عید ہوئی

———————————————————————————–

Ain Mumkin Hai Koi Bichra Hua Mil Jaye
Kiyu Na Is Baar Tere Gaaon Ka Mela Dekhen

عین ممکن ہے کوئی بچھڑا ہوا مل جائے
کیوں نہ اس بار تیرے گائوں کا میلہ دیکھیں

———————————————————————————–

sad Eid ashaar

Eid Milnay Zaroor Aunga
Wa’ada Kar Kay Mukar Gaya Koi

عید ملنے ضرور آئوں گا
وعدہ کر کے مکر گیا کوئی

———————————————————————————–

Yaado Ki Kitabo Ko Samnay Rakh Kr
Meri Eiden Band Kamray Me Guzr Jati Hain

یادوں کی کتابوں کو سامنے رکھ کر
میری عیدیں بند کمرے میں گزر جاتی ہیں۔۔۔

———————————————————————————–

Eid ke ashaar

Hum Na Manain Gay Eid Aai Hai
Aap Aatay To Eid Bhi Aati

ہم نہ مانیں گے عید آئی ہے
آپ آتے تو عید بھی آتی

———————————————————————————–

SAD EID COUPLET
Tujh Se Bichre Tou Ab Hosh Nahin
Kab Chaand Hua, Kab Eid Hui

تجھ سے بچھڑے ہیں تو اب ہوش نہیں
کب چاند ہوا کب عید ہوئی۔۔۔



———————————————————————————–

Adhoore Tishna Sawalon Ke Saath
Kuch Apnay Kuch Auron Ke Hawaalon Ke Saath
Jo Socha Tha Wo Toh Mil Saka Nahin
Bin Mangi Chand Muraadon Ke Saath
Guzar Jata Hai, Guzzar Jaye Gaa
Bay Kaal Saa, Kuch Uljha Saa
Ik Aur Eid Ka Din….

ادھورے تِشنہ سوالوں کے ساتھ۔
کچھ اپنے کچھ اوروں کے حوالوں کے ساتھ۔
جو سوچا تھا وہ تو مِل سکا نہیں۔
بِن مانگی چند مُرادوں کے ساتھ۔
گُزر جاتا ہے گُزر جائے گا۔
بے کال سا، کچھ الجھا سا۔
ایک اور عید کا دِن۔

———————————————————————————–

Kuch Muskurahatain Udhaar Mangnii Hain Zindagi Se Mujhe
Eid Aane Wali Hay Mujhe Rasmain Nibhani Hain..

کچھ مسکراہٹیں ادھار مانگنیں ھیں، زندگی سے مجھے
عید‬ آنے والی ھے، مجھے رسمیں نبھانی ھیں

———————————————————————————–

Bichre Huwon Ki Yaad Mein Ankhen Udaas Hain
Ae Subh e Eid Ghar Ko Sajaoon Tou Kis Tarhaa!

بچھڑے ہوئوں کی یاد میں آنکھیں اُداس ہیں
اے صبحِ عید گھر کو سجائوں تو کِس طرح؟

———————————————————————————–

Eid Ka Din Hay Aj To Galey Mil Le Nasir
Rasm e Duniya Bhi Hay, Mouqa Bhi Hay, Dastoor Bhi Hay

عید کا دن ہے آج تو گلے مل ناصر
رسمِ دنیا بھی ہے ، موقع بھی ہے ، دستور بھی ہے ۔۔

———————————————————————————–

Gile Shikwe Mita Kar Muskurao Eid Ka Din Hai
Purani Ranjisho Ko Bhool Jao Eid Ka Din Hai

گِلے شِکوے مٹا کر مسکرائو عید کا دن ہے
پرانی رنجشوں کو بھول جائو عید کا دن ہے

———————————————————————————–

Eid Ke Chaand Ko Daikhe Na Koi Merey Siva
Is Kay Deedar Ko Ek Saal Guzara Main Nay

عید کے چاند کو دیکھے نہ کوئی میرے سوا
اس کے دیدار کو ایک سال گزارا میں نے

———————————————————————————–

Us Ki Mehki Hui Yaado Ki Sadaa Jaag Utthi
Dour Uffq Pe Jo Nazar Aaya Eid Ka Chaand

اس کی مہکی ہوئی یادوں کی صدا جاگ اٹھی
دور افق پہ جو نظر آیا عید کا چاند۔۔۔

———————————————————————————–

Eid Jb Aati Hay Tou Milnay Ka Imkaan Rehta Hay
Mil Kay Kiya Kahen Gey Soch Ke Dil Pareshaan Rehta Hay

عید جب آتی ہے تو ملنے کا امکان رہتا ہے۔۔
مل کر کیا کہیں گے سوچ کر دل پریشان رہتا ہے۔۔

———————————————————————————–

Kitnay Tarse Huwe Hain Khushiyo Ko
Woh Jo Eidon Ki Baat Kartay Hain

کتنے ترسے ہوئے ہیں خوشیوں کو
وہ جو عیدوں کی بات کرتے ہیں۔

———————————————————————————–

sad eid poetry in urdu

Dastoor Hai Dunya Ka Magar Ye Tou Bataao
Hum Kis Say Milen Kis Say Kahen Eid Mubarak?

دستور ہے دنیا کا مگر یہ تو بتاءو
ہم کس سے ملیں ، کس کو کہیں عید مبارک

———————————————————————————–

Baroz e EiD Sab Kay Ghar Aaty Han Mehmaan
Qadmoun Ko Terey Tarasti Rhi Chokhat Meri

بروزِ عید سب کے گھر آتے ہیں مہمان
قدموں کو تیرے ترستی رہی چوکھٹ میری

———————————————————————————–

Eid Ke Khayal Ne Khush To Kar Diya Hai Lekin
Ab Bhi Soch Ke Tumhen Dil Boht Udaas Hai

عید کے خیال نے خوش تو کر دیا ہے لیکن
اب بھی سوچ کے تمھیں دل بہت اداس ہے

———————————————————————————–

Eid 4 Lines Poetry in Urdu (Eid Shayari 4 Lines)
eid shayari 4 lines

Khushiyo Ki Shaam Or Yaado Ka Ye SamaaN
Apni Palko Pe Hargiz Sitaray Na Laayen Ge
Rakhna Sanbhaal Kar Chand KhushiyaaN Mere Leye
Mai Laut Aaon Ga Tou Eid Manayen Ge

Eid Mubarak

خوشیوں کی یہ شام اور یادوں کا یہ سماں
اپنی پلکوں پہ ستارے ہرگز نہ لائیں گے
رکھنا سنبھال کر چند خوشیاں میرے لیے
میں لوٹ آئوں گا تو عید منائیں گے



———————————————————————————–

eid sad shayari

maine chaha tujhe eid pe kuch paish karoon
jis mein ahsas ke sab rang hon roshan roshan
jis me aankhon ke tarashe huwe moti likhun
jis me shamil ho mere qalb ki dharkan dharkan

میں نے چاہا تجھے عید پہ کچھ پیش کروں
جس میں احساس کے سب رنگ ہوں روشن روشن
جس میں آنکھوں کے تراشے ہوئے موتی لکھوں
جس میں شامل ہو میرے قلب کی دھڑکن دھڑکن

———————————————————————————–

منگ عید دا تحفہ کیا بھیجاں…؟
جیہڑا پیار دے نال ٹھہا بھیجاں…؟
ڈو چیزاں ہن ‘میڈے ‘سينے وچ،
ڈس دل بھیجاں یا ساہ بھیجاں…؟
عید مبارک

———————————————————————————–

Ghairon Mein Jo Han Shaad Inhen Eid Mubarak
Jin Ko Nahin Hum Yaad Unhen Eid Mubarak
Massom Sey Armaano Ki Massom Si Duniya
Jo Kar Gaye Barbaad, Unhen Eid Mubarak

غیروں میں جو ہیں شاد اِنہیں عید مبارک
جن کو نہیں ہم یاد انہیں عید مبارک
معصوم سے ارمانوں کی معصوم سی دنیا
جو کر گئے برباد انہیں عید مبارک

———————————————————————————–

Abar e Rehmat Ban Kar Chha Jao Payam e Eid Hai
Chaar Soo Noor Barsaao Payam e Eid Hai
Ghamzada Jo Bhi Aaye Karo Us Ka Gham Dour
Mandmil Kardo Har Ik Ghao Payam e Eid Hai

ابرِ رحمت بن کر چھا جائو پیامِ عید ہے
چار سو نور برسائو پیامِ عید ہے
غمزدہ جو بھی آئے کرو اس کا غم دور
مَند مل کر دو ہر اِک گھائو پیامِ عید ہے

———————————————————————————–

Bichray Miltay Hain Baad Muddat Kay
Is Ko Roz e Saeed Kahtay Han
Dard Orron Ka Baant Lenay Ko
Bazm e Hasti Mai Eid Kahtay Han

بچھڑے ملتے ہیں بعد مدت کے
اس کو روزِ سعید کہتے ہیں
درد اوروں کے بانٹ لینے کو
بزمِ ہستی میں عید کہتے ہیں۔۔۔

———————————————————————————–

ehtamam e eid

Aye Hum Nasheen Bahisht Ba Damaan Hai Shaam e Eid
Aa Hum Bhi Dil Ke Daagh Jalain Banam e Eid
Palkon Peh Aansou’n Ke Sitary Saja Liye
Is Dhaj Say Hassraton Ne Kiya Ehtamam e Eid

اے ہم نشیں بہشت بہ داماں ہے شامِ عید
آ ہم بھی دِل کے داغ جلائیں بنامِ عید
پلکوں پہ آنسوءوں کے ستارے سجا لیے
اِس دھج سے حسرتوں نے کیا اہتمامِ عید

———————————————————————————–




No comments